ہسپتال پر ٹیکس میں چھوٹ، ایک لاکھ ماہانہ تنخواہ تک ٹیکس ختم، 9502 ارب کا بجٹ پیش

 

سپیکر راجہ پرویز اشرف کی زیر صدارت قومی اسمبلی کے اجلاس میں بجٹ وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے پیش کیا۔ اجلاس میں وزیراعظم شہباز شریف اور دیگر ارکان نے بھی شرکت کی۔
بجٹ پیش کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ مخلوط حکومت کا پہلا بجٹ پیش کرنا اعزاز کی بات ہے۔ حکومت نے نئے مالی سال 2022-23 کے لیے 9502 ارب روپے کا بجٹ پیش کیا ہے جس میں دفاع کے لیے 1523 ارب روپے، ترقیاتی کاموں کے لیے 808 ارب روپے اور سود کی ادائیگی کے لیے 3950 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
جبکہ ٹیکس وصولیوں کا تخمینہ 2000000000 روپے لگایا گیا ہے۔ 7,004 بلین۔ قومی اسمبلی کا اجلاس سپیکر راجہ پرویز اشرف کی زیر صدارت شروع ہوا۔ اجلاس میں وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل بجٹ پیش کر رہے ہیں۔ ٹیکس ریونیو کا ہدف 7004 ارب وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کی بجٹ تقریر میڈیا کو جاری کردی گئی جس کے مطابق نان ٹیکس ریونیو 2 ہزار ارب روپے ہوگا،
ٹیکس ریونیو کا ہدف 7004 ارب روپے ہے، این ایف سی ایوارڈ کے تحت صوبوں کو 4 ہزار 100 ارب روپے ملیں گے۔ روپے کا بجٹ۔ پاکستان بیت المال کے لیے 6 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ ہسپتال ٹیکس کٹوتی بجٹ تقریر کے مطابق ٹیکس تنازعات کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائے گا۔
خیراتی ہسپتال میں 50 سے زیادہ بیڈز ہوں تو ٹیکس میں مکمل چھوٹ دی جائے گی۔ کینولا اور سورج مکھی کے بیجوں پر سیلز ٹیکس ختم کر دیا گیا۔ خوردنی تیل کی ملکی پیداوار بڑھانے کے لیے انقلابی اقدامات کیے گئے ہیں، زرعی ٹریکٹروں کا سیلز ٹیکس ختم کیا جا رہا ہے، کینولا اور سورج مکھی کے بیجوں پر 17 فیصد سیلز ٹیکس ختم کیا جا رہا ہے۔
سولر پینل کی درآمد پر سیلز ٹیکس ختم کر دیا گیا۔ بجٹ تقریر کے مطابق توانائی کی کمی کو دور کرنے کے لیے رعایتیں دی جارہی ہیں، سولر پینلز کی درآمد اور مقامی سپلائی پر سیلز ٹیکس ختم کر دیا گیا ہے اور بجلی کے غریب صارفین کو سولر پینل قسطوں میں ملیں گے۔ ایک لاکھ ماہانہ تنخواہ تک ٹیکس ختم کر دیا گیا۔ بجٹ تقریر کے مطابق تنخواہ دار طبقے کے لیے ٹیکس چھوٹ کی حد 600,000 سے بڑھا کر 12 ملین کر دی گئی ہے۔ کاروباری افراد اور ایسوسی ایشن آف پرسنز کے لیے ٹیکس چھوٹ کی حد 400,000 سے بڑھا کر 600,000 کر دی گئی ہے۔
نان فائلرز کے لیے ٹیکس کی شرح 100 فیصد سے بڑھا کر 200 فیصد کر دی گئی ہے۔ بچت اسکیموں پر ٹیکس میں کمی پنشنرز، ویلفیئر سرٹیفکیٹس سمیت بچت سکیموں کے منافع پر ٹیکس 10 فیصد سے کم کر کے 5 فیصد کر دیا گیا ہے۔ یہ پڑھیں: وفاقی کابینہ نے بجٹ کی منظوری دے دی، تنخواہوں میں 15 فیصد اضافہ بجلی کے بلوں پر خوردہ فروشوں سے ٹیکس وصول کیا جائے گا۔ ریٹیلرز کے لیے فکسڈ ٹیکس کا نظام متعارف کرایا گیا ہے۔ بجلی کے بلوں کے ساتھ ٹیکس بھی وصول کیا جائے گا۔ ٹیکس کی شرح 3,000 سے 10,000 روپے ہوگی۔ ایف بی آر تاجروں سے مزید سوالات نہیں کرے گا۔ ڈھائی کروڑ سے زائد کی جائیداد کے کرائے پر ایک فیصد ٹیکس عائد بجٹ میں ڈھائی کروڑ روپے سے زائد کی پراپرٹی کے کرائے پر ایک فیصد ٹیکس عائد کیا گیا ہے۔
جن کی سالانہ آمدنی 300 ملین روپے یا اس سے زیادہ ہے ان پر 2 فیصد ٹیکس لگایا جاتا ہے۔ گاڑیوں کے ٹیکس میں اضافہ 1600 سی سی سے بڑی گاڑیوں پر ایڈوانس ٹیکس بڑھا دیا گیا ہے۔ الیکٹرک انجن کی صورت میں 2 فیصد ایڈوانس ٹیکس بھی لاگو ہوگا۔ وزارت قانون و انصاف کے لیے 1 ارب 81 کروڑ روپے مختص بجٹ میں روپے وزارت قانون و انصاف کے لیے 1.81 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ سپریم کورٹ کراچی رجسٹری کی عمارت کے لیے 50 کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔
اسلام آباد ہائی کورٹ کی نئی عمارت کی تعمیر کے لیے 45 کروڑ روپے، وفاقی عدالتوں کی آٹومیشن کے لیے 39 کروڑ روپے، فیڈرل کورٹس کمپلیکس لاہور کے لیے 100 ملین روپے، وزارت قانون کے ریکارڈ کی ڈیجیٹلائزیشن کے لیے 46.6 ملین روپے اور اٹارنی جنرل کے لیے 1.5 کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔ نیا دفتر. بے نظیر سکالرشپ پروگرام کا دائرہ ایک کروڑ بچوں تک بڑھانے کا اعلان بجٹ میں بے نظیر سکالرشپ پروگرام کا دائرہ کار ایک کروڑ بچوں تک بڑھانے کا اعلان کیا گیا۔
بے نظیر انڈر گریجویٹ اسکالرشپ 10,000 طلباء کو دیے جائیں گے۔ 9 ارب۔ ایچ ای سی کے لیے 104 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام میں پہلے سے رجسٹرڈ ہونے والوں کو جون سے ادائیگیاں کی جا رہی ہیں جبکہ مزید 60 لاکھ مستحق افراد کو بھی پروگرام میں شامل کیا جا رہا ہے۔ بجلی پر 570 ارب کی سبسڈی بجلی کی سبسڈی کی مد میں 570 ارب روپے اور پٹرولیم کے بقایا جات کی مد میں 248 ارب روپے۔ فصلوں اور مویشیوں کے لیے 21 ارب فصلوں اور مویشیوں کی پیداوار بڑھانے کے لیے 21 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
گرین یوتھ موومنٹ شروع کرنے کا اعلان حکومت نے گرین یوتھ موومنٹ شروع کرنے کا بھی اعلان کیا۔
وزیر خزانہ نے کہا کہ لیپ ٹاپ سب کو قسطوں میں دیے جائیں گے جب کہ مفت لیپ ٹاپ بھی میرٹ پر دیے جائیں گے۔ ملک بھر میں نوجوانوں کے لیے 250 منی اسٹیڈیم بنائے جائیں گے۔ فلم انڈسٹری کے لیے ٹیکسوں میں کمی وزیر خزانہ کے مطابق بائنڈنگ فلم فنانس فنڈ 1 ارب روپے کی سالانہ گرانٹ سے قائم کیا جا رہا ہے۔
انہوں نے میڈیکل انشورنس پالیسی کے اجراء کا اعلان کیا، جس سے فلم سازوں کو پانچ سال کی ٹیکس چھٹی دی گئی۔ نئے سینما گھروں، پروڈکشن ہاؤسز، فلم میوزیم کو 5 سال انکم ٹیکس کی چھوٹ ملے گی۔ وزیر خزانہ نے فلم اور ڈرامہ کھیلوں پر 10 سال کے لیے ٹیکس چھوٹ، سینما اور پروڈیوسرز کے لیے انکم ٹیکس میں چھوٹ کا اعلان کیا۔

 

امیگریشن سے متعلق سوالات کے لیے ہم سے رابطہ کریں۔

کینیڈا کا امیگریشن ویزا، ورک پرمٹ، وزیٹر ویزا، بزنس، امیگریشن، سٹوڈنٹ ویزا، صوبائی نامزدگی  .پروگرام،  زوجیت ویزا  وغیرہ

نوٹ:
ہم امیگریشن کنسلٹنٹ نہیں ہیں اور نہ ہی ایجنٹ، ہم آپ کو RCIC امیگریشن کنسلٹنٹس اور امیگریشن وکلاء کی طرف سے فراہم کردہ معلومات فراہم کریں گے۔

ہمیں Urduworldcanada@gmail.com پر میل بھیجیں۔

    Jobs Hiring

    ویب سائٹ پر اشتہار کے لیے ہم سے رابطہ کریں۔

    اشتہارات اور خبروں کیلئے اردو ورلڈ کینیڈا سے رابطہ کریں     923455060897+  یا اس ایڈریس پرمیل کریں
     urduworldcanada@gmail.com

    رازداری کی پالیسی

    اردو ورلڈ کینیڈا کے تمام جملہ حقوق محفوظ ہیں۔ ︳    2024 @ urduworld.ca