پنجاب کا 3226 ارب روپے کا بجٹ پیش، تنخواہوں میں 30 فیصد اور پنشن میں 15 فیصد اضافہ

صوبائی وزیر خزانہ اویس لغاری نے پنجاب کا آئندہ مالی سال 23-2022 کا بجٹ پیش کر دیا ہے جس کا بجٹ 24 ارب روپے ہے۔ 3,226 بلین۔ چلا گیا ہے

گورنر پنجاب کے جاری کردہ نوٹیفکیشن کی روشنی میں پنجاب اسمبلی کا بجٹ اجلاس ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی دوست محمد مزاری کی زیر صدارت ایوان اقبال میں منعقد ہوا۔ شرح نمو تیزی سے بڑھ رہی تھی جبکہ گزشتہ ساڑھے تین سالوں میں کوئی بھی ترقیاتی منصوبہ مکمل نہیں ہوا۔

اویس لغاری نے کہا کہ پنجاب حکومت نے مالی سال 2022-23 کا بجٹ 10 ارب روپے رکھنے کی تجویز دی ہے۔ 3226 ارب روپے جو ٹیکس فری ہوں گے یعنی حکومت نے کوئی نیا ٹیکس نہیں لگایا۔

انہوں نے کہا کہ سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 30 فیصد اور ریٹائرڈ ملازمین کی پنشن میں 15 فیصد اضافے کی تجویز ہے۔ روپے مختص کرنے کی تجویز ہے۔ مقامی حکومتوں کے لیے 528 ارب روپے۔ ترقیاتی اخراجات کے لیے 685 ارب روپے۔ تنخواہوں کے لیے 435 ارب روپے،

یہ بھی پڑھیں: پنجاب کے بجٹ کا معاملہ مزید سنگین، اسپیکر اور گورنر کا الگ الگ اجلاس طلب

بجٹ میں مہنگائی اور آمدنی کے درمیان بڑھتے ہوئے فرق کو کم کرنے کے لیے سرکاری ملازمین کے لیے خصوصی الانسز تجویز کیے گئے ہیں۔ گریڈ 1 سے گریڈ 19 تک کے ملازمین کو بنیادی تنخواہ کا 15 فیصد اضافی دیا جائے گا۔ کم از کم اجرت 20,000 روپے ماہانہ سے بڑھا کر 25,000 روپے ماہانہ کی جا رہی ہے۔

24 فیصد اضافے کے ساتھ نان ٹیکس ریونیو کا تخمینہ 163 ارب روپے، ایکسائز ریونیو کی وصولی کے اہداف 2 فیصد اضافے سے 43 ارب روپے، بورڈ آف ریونیو 44 فیصد اضافے کے ساتھ 96 ارب روپے، پنجاب ریونیو اتھارٹی کا ہدف 190 ارب روپے اضافے کے ساتھ 22% یہ بھی پڑھیں: پنجاب کا بجٹ پیش نہیں کیا گیا آئندہ مالی سال میں تنخواہوں کے لیے 435.87 ارب روپے، پنشن کے لیے 312 ارب روپے اور مقامی حکومتوں کے لیے 528 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔۔روپے ترقیاتی پروگرام کے لیے 685 ارب روپے تجویز کیے گئے ہیں۔ روپے مختص کرنے کی تجویز ہے۔ صحت کے شعبے پر 10 فیصد اضافے کے ساتھ 485.26 بلین۔ تعلیم کے لیے 428.56 ارب روپے اور ہیلتھ کارڈ کے لیے 125 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔ روپے کی رقم وزیراعلی پبلک سروس پیکج کے تحت 200 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ 10 کلو آٹے کا تھیلا 650 روپے میں اب عوام کو 490 روپے میں دستیاب ہے۔ اس پیکج کی مالیت 142 ارب روپے ہے۔

سروسز پر سیلز ٹیکس میں ٹیکس ریلیف جاری رکھنے کے فیصلے پر کوئی نیا ٹیکس نہیں لگایا گیا۔ مسلم لیگ ن کا انقلابی منصوبہ وزیر اعلی لیپ ٹاپ سکیم کو بھی زندہ کیا جا رہا ہے۔ روپے رحمت العالمین پروگرام کے تحت وظائف کے لیے 86 کروڑ روپے مختص کیے جا رہے ہیں۔ جنوبی پنجاب کے لیے 239.79 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔

بجٹ کے اہم نکات

صنعتی شعبے کی بحالی کے لیے 23.80 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
پنجاب کے ہسپتالوں میں مفت ادویات کی بحالی کا اعلان

آبپاشی اسکیموں کو شمسی توانائی پر منتقل کرنے کے لیے 1.5 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
تعلیم کے لیے 485 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
سکولوں میں مفت کتابوں کی فراہمی کے لیے 3.20 ارب روپے مختص
لیپ ٹاپ پراجیکٹ کے لیے 1.5 ارب روپے مختص
موسمیاتی تبدیلی کے لیے 6 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
خواتین کی فلاح و بہبود اور ترقی کے لیے 1.27 بلین روپے مختص کیے گئے ہیں۔
گریڈ 1 سے 19 کے ملازمین کے لیے 15% خصوصی الانس کی تجویز
آئندہ مالی سال میں تنخواہوں کے لیے 435.82 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔
پنشن کے لیے 312 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔
پنجاب میں مقامی حکومتوں کے لیے 528 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔
دیگر ترقیاتی سکیموں کے لیے 41 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔
انسانی حقوق کی اقلیتوں کے لیے 3.26 بلین مختص
صوبائی آمدنی کا تخمینہ 500.53 بلین لگایا گیا ہے۔
لائیو سٹاک کے لیے 4.29 ارب روپے مختص
جنگلات کے لیے 4.5 ارب روپے مختص
جنوبی پنجاب کے لیے 31.50 ارب

انہوں نے کہا کہ آئندہ مالی سال کا بجٹ پچھلے سال کے مقابلے میں 22 فیصد زیادہ ہے جس میں 2000 روپے PK-I کے لیے 5 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ سامان کے پیکجز لا رہے ہیں جبکہ سستے آٹے کی فراہمی کو ممکن بنانے کے لیے 200 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔

 

 

محکمہ پولیس میں اصلاحات کے لیے 149 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔

محکمہ پولیس میں اصلاحات کے لیے ایک سو پینتالیس ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ صاف پانی کے منصوبوں کے لیے گیارہ ارب پچانوے کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔

صوبائی وزیر خزانہ نے کہا کہ مجموعی آمدن کا تخمینہ 2521.29 ارب روپے لگایا گیا ہے جبکہ تعلیم کے لیے 485 ارب روپے، ترقیاتی منصوبوں کے لیے 78 ارب روپے، شہری ترقی کے لیے 21 ارب روپے اور جنوبی پنجاب کے لیے 31 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔ روپے 50 کروڑ، روپے دیگر ترقیاتی سکیموں کے لیے 41 ارب روپے اور مقامی حکومتوں کے لیے 528 ارب روپے۔

 

امیگریشن سے متعلق سوالات کے لیے ہم سے رابطہ کریں۔

کینیڈا کا امیگریشن ویزا، ورک پرمٹ، وزیٹر ویزا، بزنس، امیگریشن، سٹوڈنٹ ویزا، صوبائی نامزدگی  .پروگرام،  زوجیت ویزا  وغیرہ

نوٹ:
ہم امیگریشن کنسلٹنٹ نہیں ہیں اور نہ ہی ایجنٹ، ہم آپ کو RCIC امیگریشن کنسلٹنٹس اور امیگریشن وکلاء کی طرف سے فراہم کردہ معلومات فراہم کریں گے۔

ہمیں Urduworldcanada@gmail.com پر میل بھیجیں۔

    Jobs Hiring

    ویب سائٹ پر اشتہار کے لیے ہم سے رابطہ کریں۔

    اشتہارات اور خبروں کیلئے اردو ورلڈ کینیڈا سے رابطہ کریں    9946622  (825)  1+   یا اس ایڈریس پرمیل کریں
     urduworldcanada@gmail.com

    رازداری کی پالیسی

    اردو ورلڈ کینیڈا کے تمام جملہ حقوق محفوظ ہیں۔ ︳    2023 @ urduworld.ca